اپنوں کے ہاتھوں جلنے والی باغ کی اقصیٰ دم توڑ گئی۔

آزادکشمیر کے ضلع باغ کے علاقہ کھرل عباسیاں کی رہائشی سولہ سالہ اقصیٰ راولپنڈی کے اسپتال میں زندگی کی بازی ہار گئی اقصیٰ کو پسند کی شادی کیلئے اسرار کرنے پر اس کے رشتہ داروں نے تیل چھڑک کر آگ لگا دی تھی جس سے وہ بری طرح جھلس گئی۔اقصیٰ منگل کے روزہولی فیملی اسپتال راولپنڈی میں چل بسی جس کی ڈیڈ باڈی آبائی علاقہ کھرل عباسیاں روانہ کردی گئی ہے جہاں اس کی تدفین ہو گی۔اقصیٰ کو جلانے کے واقع کو اس کے خاندان نے اتفاقیہ واقعہ قراردیکراصل واقعات کی پردہ پوشی کرنے کی کوشش کی ہے جبکہ دوسری جانب اقصیٰ کو جلانے والے افراد پر گاؤں کے جرگہ نے پندرہ لاکھ روپے جرمانہ بھی عائد کیا تھا ۔واقعہ۔کے بعد صحافیوں اوت سماجی کارکنان کی جانب سے سوشل میڈیا پر اقصیٰ کو انصاف دلانے کیلئے مہم چلائی گئی ۔آزادکشمیر کے وزیر اعظم راجہ فاروق حیدر بھی اس واقعہ کا نوٹس لیا تھا لیکن تاحال ایف آئی آر درج ہوئی نا واقعہ کے رپورٹ سامنے آئی ۔

Author: News Editor

تبصرہ جات بذریعہ فیس بک

اپنا تبصرہ لکھیں

اپنا تبصرہ بھیجیں